عقائد و ایمانیات - دعوت و تبلیغ

India

سوال # 10749

مولانا الیاس اور ان کی دینی دعوت میں لکھا ہے کہ جب مولوی الیاس صاحب ذکر کے لیے تسبیح اٹھاتے تو ایسا محسوس کرتے کہہزاروں من کے پتھر ان کے قلب پر رکھ دئے گئے ہوں۔ یعنی اطمینان نہیں ذکرکرتے وقت ان کو۔ اللہ نے فرمایا ?الا بذکر اللہ تطمئن القلوب? اللہ کا ذکر دلوں کے لیے اطمینان بخش ہے۔ اللہ کا قرآن تو سچ ہے۔ ہمارا سوال ہے کہ الیاس صاحب کس کا ذکر کرتے تھے؟ اگر وہ اللہ کا ذکر کرتے تو اطمینان ضرور ملتا۔

Published on: Feb 19, 2009

جواب # 10749

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 271=246/د


 


قرآن کریم میں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنی امت کے لیے اس قدر بے چین رہتے تھے گویا کہ اپنے کو ہلاک کرڈالیں گے: ولَعَلَّکَ بَاخِعٌ نَّفْسَکَ الخ اور حدیث میں ہے کہ آپ ہروقت اللہ کا ذکر فرماتے تھے۔ پھر قرآن میں ہے : أَلاَ بِذِکْرِ اللّٰہِ تَطْمَئِنُّ الْقُلُوْب، اب آپ کو سمجھنے میں آسانی ہوگی کہ ذکر سے جو سکون ملتا ہے وہ دل کا اپنا ذاتی سکون ہے اور جو بے چینی بوجھ اور درد ہے وہ اپنی امت کی فکر ہے۔ یہی وہ بے چینی ہے جو تبلیغی جماعت کی بنیاد کا سبب بنی اور جس شخص کے اندر واقعی درد و تڑپ امت کے لیے ہوگی تو پھر وہ خود اس حالت کا مشاہدہ کرے گا۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات