India

سوال # 155464

حضرت مفتی صاحب! کیا سر کے بال کم زیادہ کاٹنا جائز ہے؟ یا اس میں مشابہت کا اعتبار یا تمام بال کہیں سے بھی کم زیادہ کاٹیں جائز ہے یا نہیں؟
(۲) داڑھی کے بال صاف کرنا اور خط رکھنا ایک مشت سے کم دونوں میں برابر گناہ ہے یا کم زیادہ؟ اور دونوں فاسق ہیں یا نہیں؟
(۳) ایک مشت دو انگلی سے زیادہ داڑھی رکھنا کیسا ہے؟

Published on: Nov 11, 2017

جواب # 155464

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:113-91/M=2/1439



(۱) سر کے بال کٹوانے کا درست طریقہ یہ ہے کہ ہرطرف سے برابر کٹوائے جائیں، از راہِ فیشن کہیں سے کم کہیں سے زیادہ کٹوانا خلاف سنت اور برا ہے، حدیث میں فرمایا گیا ہے کہ احلقوا کلہ أو اترکوہ کلہ یعنی پورا حلق کراوٴ یا پورا چھوڑدو، آدھے سر کا حلق اور آدھے میں بال رکھنا منع ہے۔



(۲) دونوں فاسق ہیں اور خلاف سنت داڑھی رکھنے کے گناہ میں دونوں برابر ہیں صرف انیس بیس کا فرق ہے۔



(۳) ایک مشت سے زائد ڈاڑھی رکھنا جائز ہے اور زائد حصے کو کٹوانے کی بھی اجازت ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات