معاملات - بیع و تجارت

India

سوال # 69838

میں نے اپنا بزنس دو سال پہلے شروع کیا تھا اور یہ آن لائن سیلنگ بزنس (selling business) تھا اور اس وقت میں نے سوچاتھا کہ کچھ متعین رقم پر آرڈر میں اللہ کی راہ میں خرچ کروں گا، اور میں ایسا کرتا رہا لیکن پھر بعد میں competition (مقابلہ) بہت زیادہ ہوگیا اور منافع
فیصدبہت زیادہ گر گیا جس کی وجہ سے وہ رقم نکالنا میرے لیے مشکل ہوگئی، لیکن میں کچھ پیسے اس میں سے اسی نیت کی بنیاد پر خرچ کرتا ہوں لیکن وہ جو درحقیقت میں نے سوچا تھا شروعات میں وہ پورا نہیں کر پارہا ہوں، اب ایک بات جو میرے ذہن میں آتی ہے کہ میں نے جو پہلے فیصلہ کیا تھا اس کو پورا نہیں کر پارہا ہوں توایک خواہش ہمیشہ رہتی ہے میرے ذہن میں، اس کے کفارے کی سبیل ہو سکتی ہے؟

Published on: Nov 5, 2016

جواب # 69838

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 1490-1504/L37=2/1438

اگر آپ نے صرف دل میں ارادہ کیا تھا باقاعدہ طور پر آپ نے نذر نہیں مانی تھی تو ہرآرڈر پر متعین رقم نکالنا آپ پر لازم نہیں لیکن چونکہ آپ نے ایک کارِ خیر کا ارادہ کیا تھا اس لیے حسب سہولت جتنا ہوسکے نکال دیا کریں اور کبھی کسی وجہ سے نہ نکال سکیں تو اس میں بھی کوئی حرج نہیں ہے، اس کا کوئی کفارہ نہیں ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات