معاملات - بیع و تجارت

India

سوال # 175745

بجاج فائنانس کے ذریعہ کوئی بھی الیکٹرونکس اشیاء خریدی جاتی ہیں جو کہ قسطوں میں ادا کرنی پڑتی ہے، ایک قسط ادا کرنے پر وہ اشیاء ملتی ہیں اور باقی قسطیں ماہانہ ہمیں ادا کرنی ہوتی ہیں، بجاج فائنانس کے لیے کمپنی والے کچھ فیس لیٹ ہیں، کیا ایسی صورت میں ہم کوئی اشیاء خرید سکتے ہیں؟

Published on: Jan 12, 2020

جواب # 175745

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 440-403/M=05/1441



قسطوں پر جائز اشیاء کی خریداری منع نہیں ہے شرعاً جائز ہے لیکن شرط یہ ہے کہ عقد کے وقت اُدھار کا معاملہ اور مبیع کی پوری قیمت طے ہو جائے، ایسا نہ ہو کہ وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ ثمن میں اضافہ ہوتا جائے اگر ایسا ہوا تو یہ سودی معاملہ ہوگا اور لیٹ فیس لینا دینا بھی ناجائز ہے اگر عقد بیع میں سودی معاملہ مشروط ہو تو اس طرح لین دین کرنے سے احتراز لازم ہے، بجاج فائنانس کے ذریعہ الیکٹرونکس اشیاء کی خریداری کی تفصیل وضاحت کے ساتھ لکھ کر کرتے تو بہتر تھا۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات