معاملات - بیع و تجارت

India

سوال # 155350

۲/ اکتوبر کو سعودی عرب میں مولانا مکی الحجازی صاحب نے یہ کہا کہ نکاح میں لڑکی والوں کی طرف سے جو کھانے کی دعوت ہوتی ہے وہ جائز نہیں اور اس کا کھانا حرام ہے؟
یوٹیوب پر ہے ”روزانہ تفسیرمکی“ چینل پر۔ کیا میں اب سے کسی بھی نکاح میں لڑکی والوں کی جانب سے ہونے والے کھانے کو نہ کھاوٴں؟

Published on: Nov 12, 2017

جواب # 155350

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:76-83/sd=2/1439



شادی کے موقع پر لڑکی والوں کا دعوت کرنا نہ مسنون ہے اور نہ مستحب ؛ لیکن حرا م اور ناجائز بھی نہیں ہے ؛ ہاں ایک مباح اور جائز درجہ کی چیز ہے ،لہذا حسب موقع لڑکے والوں کے ساتھ اپنے کچھ خاص متعلقین کو مدعو کر نے کی گنجائش ہے بشرطیکہ اس کو لازم اور ضروری نہ سمجھا جائے اور اس کو مستقل دعوت مسنونہ کا درجہ نہ دیا جائے۔( آپ کے مسائل اور اُن کا حل : ۶/۳۱۴،بعنوان : نکاح کے وقت لڑکی والوں کا دعوت کرنا، ط: مکتبہ لدھیانوی )



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات