معاملات - بیع و تجارت

india

سوال # 153330

کیا فرماتے ہیں علمائے دین مندرجہ مسئلہ میں ایک شخص اپنے آم کے باغ کے پھل دو سال کے لیے بیچتا ہے ، پھل آنے سے پہلے اور ساتھ ہی باغ کی زمین کھیتی کرنے کے لیے اسی شخص کو کرائے پر دیتا ہے دونوں کی مدت ایک ہے تو کیا یہ معاملہ درست ہے ۔

Published on: Sep 14, 2017

جواب # 153330

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1144-1280/sd=12/1438



پھل آنے سے پہلے باغ بیچنا ناجائز ہے ، یہ معدوم کی بیع ہے ، جس کی احادیث میں ممانعت آئی ہے ؛ البتہ باغ کی زمین کھیتی کے لیے کرایہ پر اُسی شخص کو دینا جائز ہے ،جب کہ کرایہ کی مدت اور اجرت متعین کر لی جائے ۔





 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات